بنیادی صفحہ / کاروبار / ابھرتے ہوئے کاروبار / ہندوستان میں اتنے چینلز کے مالک ہیں جیل میں! توبہ توبہ !!

ہندوستان میں اتنے چینلز کے مالک ہیں جیل میں! توبہ توبہ !!

‘(صحافت نے جب سے تجارت کی راہ پکڑی ہے سب سے زیادہ ٹی وی چینلز کے مالک دھوکہ دھڑی کے الزام میں گرفتار ہوئے ہیں،زی نیوز کے ایڈیٹر سودھیر چودھری سوکروڑ کی رشوت کے الزام میں جیل جا چکے ہیں جبکہ زی کے مالک نے اپنے اثر و رسوخ کا استعمال کر کے گرفتاری سے بچنے میں کامیاب رہے ہیں۔دلچسپ بات یہ ہے کہ زیادہ تر لوگ اقتصادی گھوٹالوں میں جیل میں بند ہیں. گھوٹالے بھی چھوٹے موٹے نہیں، تمام ہزاروں کروڑ کے معاملات میں سلاخوں کے پیچھے ہیں. ان میں سے زیادہ تر چٹ فنڈ گھوٹالے میں پھنسے ہوئے ہیںاسی تناظر میں سینئر صحافی پرکاش ہندوستانی نے گذشتہ برس ایک بلاگ لکھا تھا ، جسے افادہ عام کی خاطران کی اجازت سے یہاں شائع کیا جا رہا ہے۔ادارہ معیشت)

پرکاش ہندوستانی

پرکاش ہندوستانی

آزادی کے بعد یہ پہلا موقع ہے، جب اتنی بڑی تعداد میں میڈیا کے مالک جیل کی سلاخوں کے پیچھے پہنچے ہیں. سہارا ٹی وی گروپ کے مالک سبرتو رائے سہارا جیل میں ہیں اور ضمانت کی رقم کے انتظام میں لگے ہے. تقریبا ًدو سال میں وہ ضمانت کی رقم جمع نہیں کر پائے. دو لاکھ کروڑ کی سلطنت کا مالک ہونے کا دم بھرنے والے سبرتو رائے دس ہزار کروڑ نہیں جٹا پا رہے ہیں. اسی طرح پی -7 چینل اور پرل گروپ کے مالک نرمل سنگھ بھگو بھی جیل میں ہیں. خبر بھارتی چینل کے مالک بگھیل سائي پرساد گروپ کے ششانک بھاپكر، مہوا گروپ کے ہندی، بھوجپوری، بنگلہ زبانوں کے کئی چینلز کے مالک پی كے تیواری بھی جیل میں ہیں.
اسی طرح شاردا گروپ کے چینل -10 کے مالک سديپتو سین بھی جیل میں ہیں. ’’خوشحال زندگی گروپ ‘‘ نامی چٹ فنڈ کمپنی کے مالک اور لائیو انڈیا نام کے چینل کے مالک مہیش كسن موتیوار جیل میں بند ہیں.
ان میں سے زیادہ تر ٹی وی چینلز کے مالک فراڈ کیس میں گرفتار ہیں. اسٹار کے سابق سی ای او پیٹر مکھرجی شینا بورا قتل میں اپنی بیوی اندراني کے ساتھ بند ہیں. اڈیشہ کے کامیاب ٹی وی چینل کے مالک منوج بندے اور اوڈشا بھاسکر نیوز پیپر کے مدھوسودن موہنتی بھی سی بی آئی کے جال میں ہیں.
ان میں سے زیادہ تر لوگ اقتصادی گھوٹالوں میں جیل میں بند ہیں. گھوٹالے بھی چھوٹے موٹے نہیں، تمام ہزاروں کروڑ کے معاملات میں سلاخوں کے پیچھے ہیں. ان میں سے زیادہ تر چٹ فنڈ گھوٹالے میں پھنسے ہوئے ہیں. سبرتو رائے سہارا جو کبھی اربوں میں کھیلتے تھے، تہاڑ جیل میں بند ہیں اور اپنی عزت بچانے کے لئے جیل میں کتابیں لکھ رہے ہیں. گویا ان کو آزادی کی لڑائی کے لئے جیل کی سزا ملی ہو. سبرتورائے سہارا ہزاروں لوگوں کے اربوں روپے کھا کر ڈکار نہیں لے رہے ہیں. ہزاروں لوگوں سے انہوں نے اربوں روپے مکان کے نام پر لیا ہے اور شاید ہی کسی کو مکان فراہم کیا ہے. چین مارکیٹنگ کے سہارے لوگوں کو سود کا لالچ دے دے کر انہوں نے اربوں روپے اکٹھے کئے. سیبی، ہائی کورٹ، سپریم کورٹ اور ریزرو بینک آف انڈیا ان کے خلاف متعدد معاملات کی تحقیقات کرا چکا ہے. ان کمپنیوں کے خلاف سینکڑوں معاملے زیر غور ہیں. اس کے باوجود سبرتو رائے ایسی بڑی بڑی باتیں کرتے ہیں گویا وہ کوئی فرشتہ ہوں.

جیل میں قید چینل مالکان

جیل میں قید چینل مالکان

پرل گروپ کے نرمل سنگھ بھگو کی کہانی بھی کم دلچسپ نہیں ہے. دھوکے بازی میں وہ سبرتو رائے کو پیچھے چھوڑ چکے ہیں. پورے ملک میں اربوں کی جائیداد بنا چکے نرمل سنگھ بھگو نے بھی سبرتو رائے سہارا کی ہی طرح حفاظتی ڈھال کے طور پر میڈیا کے دھندے میں داخلہ لیا تھا. انہیں لگا تھا کہ چینل کے بہانے کوئی انہیں ہاتھ نہیں لگائے گا، لیکن قانون کے طویل ہاتھ اور اپنے گناہوں کی وجہ سے نرمل سنگھ بھگو بھی جیل کی سلاخوں کے پیچھے ہیں. بھگو کا پی -7 چینل بند ہو چکا ہے. لاکھوں سرمایہ کار ان کے نام پر خون کے آنسو رو رہے ہیں. سینکڑوں صحافی روزی روٹی کی تلاش میں مصروف ہیں. اس کے بعد بھی بھگو لوگوں کو کہہ رہے ہیں کہ وہ صبر کا دامن نہ چھوڑیں، ان کا پیسہ انہیں مل جائے گا.
جس طرح سبرتو رائے سہارا لمبریٹاا سکوٹر پر گھوم گھوم کر اپنی چٹ فنڈ کمپنی کے لئے لوگوں سے پیسے مانگا کرتے تھے، اسی طرح نرمل سنگھ بھگو نے بھی اپنا سفر معمولی سے کام سےشروع کیا تھا. پنجاب کے چمكور صاحب ضلع میں بھگو سائیکل پر گھر گھر جاکر دودھ بیچتے تھے. اس دوران ان کے رابطے میں بہت سے لوگ آئے اور انہوں نے چٹ فنڈ کمپنی کے ایجنٹ کا کام بھی شروع کر دیا. آہستہ آہستہ ان کا دھندہ چل نکلا اور انہوں نے اپنا پرل گروپ شروع کیا. پھر تعمیر کے دھندے میں آئے، جو پیسے اکٹھے کئے تھے، اسےزمین جائداد کے دھندے میں لگا دیا اور زمینوں کے بھاؤ بڑھتے ہی انہیں بیچ کر کروڑوں روپے کمائے. قوانین کے خلاف چٹ فنڈ چلانے کے معاملے میں ان کی جانچ ہوئی اور وہ قریب 49 ہزار کروڑ روپے کے ڈیفالٹر پائے گئے.
لائیو انڈیا چینل کے مالک مہیش موتےوار کی کہانی بھی کم دلچسپ نہیں ہے. مہیش موتےوار نے اپنی چٹ فنڈ کمپنی کھولی جس کا نام تھا خوشحال زندگی گروپ. سبرتو رائے سہارا کے سہارا انڈیا پریوار کی طرح ہی وہ بھی آپ کی کمپنی کو خوشحال زندگی پریوار کے نام پر پروپیگنڈہ کرتے رہے. موتےوار کی کمپنی نے پونے میں گائے اور بكرياں پالنے کا دھندہ شروع کیا. جانوروںکے فارم کھولے اور لوگوں سے کہا کہ اس دھندے میں زبردست کمائی ہے، ان کے پاس جتنے بھی پیسے ہوں وہ اس کمپنی میں لگا دیں. بکری اور گائے پالنے سے جو بھرپور منافع ملےگا، اس کا فائدہ گاؤں والے بھی اٹھائیں گےاور ایک روپے کو تین روپے میں تبدیل کیا جائے گا. یعنی دوگنا خالص منافع. شروع میں کچھ لوگوں کو موتےوار کی کمپنی نے پیسے بھی دیے. لالچ میں آکر بڑی تعداد میں لوگ خوشحال زندگی پریوار کے رکن بنے. پیسہ آتے ہی موتےوار نے ہندی اور مراٹھی نیوز چینل شروع کیا. اپنی امیج چمکانے کے لئے ان کی کمپنی ملک بھر میں خون کا عطیہ کاکیمپ لگاتی رہی اور یہ ماحول پیدا کیا گیا کہ سہارا گروپ کی طرح موتےوار کا خوشحال زندگی پریوار بھی عوامی فلاح کے کام میں لگا ہے.
مغربی بنگال کے روزویلي اور شاردا چٹ فنڈ کمپنی کے مالک بھی دھوکے بازی کے معاملے میں قانون کی گرفت میں ہیں. شاردا گروپ کے مالک سديپتو سین پولیس کی گرفت میں ہیں. روزویلي چٹ فنڈ کمپنی کے مالک گوتم کنڈو بھی جیل جا چکے ہیں. روزویلي گروپ کے ملک بھر میں ڈھائی ہزار سے زیادہ بینک اکاؤنٹ سیل کئے جا چکے ہیں. شاردا چٹ فنڈ گھوٹالے میں ترنمول کانگریس کے کئی لیڈر پھنسے ہوئے ہیں. شاردا گروپ کے مالک سديپتو سین ’’ایكھون سمے‘‘ نامی ٹی وی چینل کی فروخت کے جعلسازی میں شامل بتائے جا رہے ہیں. سی بی آئی اور ای ڈی کے جال میںسابق مرکزی وزیر متنگ سنگھ بھی پھنس چکے ہیں۔
اڈیشہ کے کامیاب ٹیلی ویژن اور اوڈیشا بھاسکر اخبار کے صدر اور منیجنگ ڈائریکٹر منوج داس اور مدھوسودن موہنتی بھی قانون کی گرفت میں ہیں. ان لوگوں نے بھی لوگوں سے غیر قانونی طریقے سے پیسے جمع کئے تھے. مجموعی طور پر ان میں سے زیادہ تر لوگوں کاکام میڈیا گروپ کو منظم کرنے کے بجائے لوگوں کو لالچ دے کر پھانسنے میں زیادہ رہا ہے. ان کے علاوہ ایسے میڈیا مالک بھی ہیںجو قتل، عصمت دری، جرم اور دوسرے غیر قانونی کاموں کی وجہ سے جیل کی سلاخوں کے پیچھے ہیں. ایسے میڈیا مالکان کی بھی ایک طویل فہرست ہے جو کسی بھی وقت جیل جا سکتے ہیں. ابھی یہ لوگ کسی نہ کسی بہانے جیل جانے سے بچ رہے ہیں.
آزادی کے پہلے جواہر لال نہرو، ماكھنلال چترویدی، لوک مانیہ تلک، بالگنگادھر گوکھلے وغیرہ بہت سے لوگ ہوئے جو آزادی کی جنگ لڑتے ہوئے شان سے جیل گئے. ان لوگوں کا جیل جانے کا ایک مقصد تھا کہ بھارت کی آزادی کی جنگ تیز ہو، لیکن اب جو میڈیا مالک جیل جا رہے ہیں، ان کا ایک محض مقصد بڑےاقتصادی گھوٹالے کرنا رہا ہے. آزادی کے بعد جو میڈیا مالک جیل گئے وہ اقتصادی گھوٹالوں میں شامل تھے. انڈین ایکسپریس کے مالک رام ناتھ گوینکا کے اکلوتے بیٹے بھگوانداس گوئنکا کو نیوز پرنٹ فراڈ کیس میں جیل جانا پڑا. ٹائمز آف انڈیا گروپ کے ہی اشوک کمار جین غیر ملکی کرنسی کے معاملے میں پھنسے تھے. وہ بری ہو پاتے، اس کے پہلے ہی ان کی موت ہو گئی. مہو کےالحلال جیسے گروپ بھی تھے، جو چھوٹے موٹے اخبار نکالتے تھے اور اب چٹ فنڈ کے اربوں روپے جمع کر کے فرار ہو گئے. ایسے لوگوں کی تعداد اتنی زیادہ ہے کہ ان کا پتہ لگانا بھی آسان نہیں.

( سینئر صحافی پرکاش ہندوستانی کے بلاگ سے)

تعارف: نمائندہ خصوصی

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*