بنیادی صفحہ / خبریں / سدرشن چینل معاملہ میں درخواست گزار نے کہا مسلمانوں کو آستین کا سانپ کہا جارہا ہے

سدرشن چینل معاملہ میں درخواست گزار نے کہا مسلمانوں کو آستین کا سانپ کہا جارہا ہے

گھھ

نئی دہلی : سپریم کورٹ جو فی الحال سدرشن چینل معاملہ میں تیز و تند تبصرہ کے سبب سرخیوں میں ہے نے بالآخر اس مقدمہ کو جلد از جلد نپٹانے کا من بنالیا یہی سبب ہے کہ اچانک اس کا رخ تبدیل ہوتا ہوا محسوس ہورہا ہے۔ معاملہ کو غلط رخ دے کر اسے زکوٰۃ فائونڈیشن اور سدرشن نیوز چینل کا جھگڑا بنا کر پیش کرنے کی کوشش شروع ہوگئی ہے جبکہ یہ پوری طرح مسلمانوں کیخلاف ہے ۔ سپریم کورٹ نے پیر کو سدرشن ٹی وی کے متنازعہ یو پی ایس سی جہاد پروگرام کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت کی۔ عدالت نے درخواست گزار سے کہا کہ اگر آپ کو کوئی پروگرام پسند نہیں ہے تو اسے نہ دیکھیں۔ اس کے بجائے ناول پڑھیں۔
جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی سربراہی میں بنچ نے سدرشن ٹی وی کے حلف نامے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان سے اپنے پروگرام میں کیا تبدیلیاں لائیں گے اس بارے میں معلومات طلب کی گئی تھی ، یہ نہیں پوچھا تھاکہ کون سا چینل کون سا پروگرام چلاتا ہے۔
سدرشن ٹی وی کی جانب سے ایڈوکیٹ وشنو شنکر جین نے کہا کہ انہیں پروگرام نشر کرنے کی اجازت ملنی چاہئے۔ وہ پروگرام کو نشر کرنے کے لئے ضابطہ اخلاق کی پیروی کریں گے۔ عدالت نے تمام اقساط کو دیکھنے کے لئے چینل کی پیش کش کو بھی مسترد کردیا۔
جسٹس چندرچوڑنے کہا ، ہم اس پورے پروگرام کو نہیں دیکھیں گے۔ اگر 700 صفحات پر مشتمل کتاب کے خلاف درخواست ہے تو ، وکلا عدالت میں بحث نہیں کرسکتے کہ جج پوری کتاب پڑھ لے۔ کیس کی اگلی سماعت بدھ کو ہوگی۔
جامعہ کے تین طلبا کی جانب سے ، وکیل شادان فراست نے کہا کہ لوگوں کو مسلمانوں کے خلاف اکسایا جارہا ہے۔ انہیں آستین کے سانپ کہا جارہا ہے۔ جسٹس چندرچوڑنے کہا کہ اگر آپ کو کوئی پروگرام پسند نہیں ہے تو نہ دیکھیں بلکہ ایک ناول پڑھیں۔ اگر یہ پروگرام کسی زکوٰۃ فاؤنڈیشن کے خلاف ہے تو ہم اپنا وقت ضائع نہیں کریں گے۔
فراست نے کہا کہ کثیر الثقافتی معاشرے میں عدلیہ کی ذمہ داری ہے کہ وہ شخصی وقار کی حفاظت کرے۔ یہ پروگرام مسلمانوں کو دشمن قرار دے رہا ہے۔ اس قسم کی نفرت انگیز تقاریر ہی پرتشدد واقعات کا باعث بنے ہیں۔ مسلمانوں کو علامتی طور پر داڑھیوں اور سبز ٹی شرٹس میں دکھایا گیا ہے۔
جسٹس چندرچوڑ نے کہا کہ عدالت اس حد تک اظہار رائے کی آزادی میں مداخلت نہیں کرسکتی۔ ہم اس پروگرام کی پیش کش پر بڑی تفصیل سے نہیں جاسکتے ہیں۔ ہم یہ نہیں کہہ سکتے کہ داڑھی اور سبز ٹی شرٹ والے شخص کی تصویر نہیں دکھائی جائے۔
مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ میں سدرشن ٹی وی کیس میں حلف نامہ داخل کیا ہے۔ مرکزی حکومت نے اپنے حلف نامے کے ذریعے کہا ہے کہ ویب پر مبنی ڈیجیٹل میڈیا کو کنٹرول کرنا چاہئے۔ جس میں ویب میگزینز اور ویب پر مبنی نیوز چینلز اور ویب پر مبنی اخبارات شامل ہیں۔
موجودہ وقت میں یہ مکمل طور پربے قابو ہیں۔ ڈیجیٹل میڈیا اسپیکٹرم اور انٹرنیٹ استعمال کرتا ہے ، جو عوامی ملکیت ہے۔ فی الحال ، ڈیجیٹل میڈیا بڑے پیمانے پر پھیل گیا ہے۔ جہاں متعدد متضاد ویڈیوز ، متضاد خبریں اور حقائق چلائے جاتے ہیں۔ جس کی وجہ سے لوگ متاثر ہورہے ہیں۔ ایسی صورتحال میں ، قانونی طور پر اس کے لئے رہنما اصول اور قواعد طے کرنا ضروری ہے۔
زکوٰ ۃفاؤنڈیشن ، جو سدرشن ٹی وی کے یو پی ایس سی جہاد پروگرام سے تنازعہ میں آئی تھی ، نے ایک وضاحت میں کہا ہے کہ تیس کروڑ روپے کےچندہ میں سے ، ان اداروں سے صرف ڈیڑھ کروڑ وصول ہوئے ہیں جن کو غلط بتایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا ہم نے اپنے تمام غیر ملکی امداد دہندگان سے حکومت کو آگاہ کیا ہے۔ حکومت نے ان کو کبھی بھی چندہ لینے سے منع نہیں کیا۔

تعارف: نمائندہ خصوصی

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*