جی ایس ٹی سلیب میں تبدیلی کا امکان

GST

نئی دہلی: گڈس اینڈ سروس ٹیکس (جی ایس ٹی) کونسل کی آئندہ ماہ ہونے والی میٹنگ میں پانچ فیصد کے ٹیکس سلیب کو ختم کرنے کی تجویز پر غور کیا جا سکتا ہے۔ یہ معلومات دیتے ہوئے ذرائع نے بتایا کہ اس کی جگہ کچھ زیادہ استعمال کی مصنوعات کو تین فیصد کے سلیب میں اور باقی کو آٹھ فیصد کے سلیب میں رکھا جاسکتا ہے۔

زیادہ تر ریاستیں ریونیو بڑھانے پر متفق ہیں، تاکہ انہیں معاوضے کے لیے مرکز پر انحصار نہ کرنا پڑے۔ اس وقت جی ایس ٹی میں 5، 12، 18 اور 28 فیصد کے چار ٹیکس سلیب ہیں۔ اس کے علاوہ سونے اور سونے کے زیورات پر تین فیصد ٹیکس عائد ہوتا ہے۔

اس کے علاوہ، کچھ غیر برانڈڈ اور غیر پیک شدہ مصنوعات ہیں جو جی ایس ٹی کو متوجہ نہیں کرتی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ریونیو بڑھانے کے لیے کونسل کچھ نان فوڈ آئٹمز کو تین فیصد سلیب میں لا کر مستثنیٰ اشیاء کی فہرست میں کمی کا فیصلہ کر سکتی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ پانچ فیصد سلیب کو 7 یا 8 یا 9 فیصد کرنے پر بات چیت جاری ہے۔ اس پر حتمی فیصلہ جی ایس ٹی کونسل کرے گی۔ مرکزی وزیر خزانہ کی سربراہی میں جی ایس ٹی کونسل میں تمام ریاستوں کے وزرائے خزانہ شامل ہیں۔ حساب کے مطابق، پانچ فیصد سلیب (جس میں بنیادی طور پر پیکڈ فوڈ آئٹمز شامل ہیں) میں ہر ایک فیصد اضافہ کے نتیجے میں تقریباً 50,000 کروڑ روپے سالانہ کی اضافی آمدنی ہوگی۔

جب کہ مختلف آپشنز پر غور کیا جا رہا ہے، توقع ہے کہ کونسل زیادہ تر اشیاء کے لیے آٹھ فیصد جی ایس ٹی پر متفق ہو جائے گی۔ اس وقت ان مصنوعات پر جی ایس ٹی کی شرح پانچ فیصد ہے۔ جی ایس ٹی کے تحت، ضروری اشیاء پر یا تو کم سے کم ٹیکس لگایا جاتا ہے یا ٹیکس سے مکمل چھوٹ ملتی ہے۔

ایک ہی وقت میں، لگژری اور نقصان دہ اشیاء پر سب سے زیادہ ٹیکس لگایا جاتا ہے۔ وہ سیس کے ساتھ 28 فیصد ٹیکس لگاتے ہیں۔ اس سیس کی وصولی کا استعمال ریاستوں کو جی ایس ٹی کے نفاذ کی وجہ سے ہونے والے محصول کے نقصان کی تلافی کے لیے کیا جاتا ہے۔ جی ایس ٹی معاوضہ کا نظام جون میں ختم ہونے والا ہے۔

ایسی صورت حال میں یہ ضروری ہو جاتا ہے کہ ریاستیں خود انحصار بنیں اور جی ایس ٹی کی وصولی میں ریونیو کے فرق کو پورا کرنے کے لیے مرکز پر انحصار نہ کریں۔

کونسل نے گزشتہ سال ریاستی وزراء کی ایک کمیٹی تشکیل دی تھی، جس کی سربراہی کرناٹک کے وزیر اعلیٰ بسواراج بومائی کر رہے تھے، تاکہ ٹیکس کی شرحوں کو معقول بنا کر اور ٹیکس کے ڈھانچے میں بے ضابطگیوں کو دور کر کے محصولات میں اضافہ کرنے کے طریقے تجویز کریں۔

امکان ہے کہ وزراء کا گروپ اگلے ماہ کے شروع میں اپنی سفارشات دے گا۔ جی ایس ٹی کونسل کی اگلی میٹنگ مئی کے وسط میں ہونے کا امکان ہے، جس میں وزراء کے گروپ کی سفارشات رکھی جا سکتی ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر