کشمیر:چھ مہینوں میں 70,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری ہوگی

MANOJ SINHA

سری نگر : جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے پیر کو کہا کہ مرکز کے زیر انتظام علاقے میں اگلے چھ مہینوں میں 70,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی توقع ہے۔

جموں و کشمیر سیاحت اور مہمان نوازی سمیت مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری لانے کے لیے کوشاں ہے اور فی الحال متحدہ عرب امارات کا ایک وفد یونین ٹیریٹری کا دورہ کر رہا ہے۔

اس سال جنوری میں دبئی ایکسپو میں لیفٹیننٹ گورنر کی دعوت کے بعد یہ وفد خطے میں سرمایہ کاری کے مواقع تلاش کرنے کے لیے اتوار کو سری نگر پہنچا۔

عہدیداروں نے بتایا کہ لیفٹیننٹ گورنر کے ساتھ رنجن پرکاش ٹھاکر، پرنسپل سکریٹری، صنعت و تجارت اور دیگر سرکاری افسران چار روزہ پروگرام کے ایک حصے کے طور پر آنے والے مندوبین کو سرمایہ کاری کے مواقع دکھائیں گے، جس میں انٹرپرینیورشپ، سیاحت اور مہمان نوازی کے شعبوں پر توجہ دی جائے گی۔

لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ جموں و کشمیر حکومت نے اب تک 26,000 کروڑ روپے سے زیادہ کی صنعتی سرمایہ کاری کی تجاویز کو منظوری دی ہے اور سرمایہ کاروں کو زمین فراہم کی ہے۔ سنہا نے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ اگلے چھ مہینوں میں 70,000 کروڑ روپے سے زیادہ کی سرمایہ کاری ہوگی۔34 رکنی وفد میں رئیل اسٹیٹ، مہمان نوازی، ٹیلی کام، امپورٹ ایکسپورٹ اور دیگر شعبوں سے تعلق رکھنے والے سرکردہ تاجر شامل ہیں۔

رنجن پرکاش ٹھاکر نے بتایا کہ یہ دورہ جموں کشمیر کے لیے ایک اچھا شگون ہے جوسرمایہ کاری اور اقتصادی ترقی کو تقویت دینے کے لیے کچھ اہم شعبوں پر توجہ مرکوز کر رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ”یہ ایک بہت ہی اعلیٰ سطح کا وفد ہے۔ زرعی صنعت، آئی ٹی اور باغبانی کے ساتھ ساتھ ہسپتال، ہوٹل ان کی گہری دلچسپی کا باعث ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی اگلے ماہ مرکزی زیر انتظام علاقے کے اپنے ممکنہ دورے کے دوران جموں اور کشمیر میں تقریباً 35,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا آغاز کریں گے۔ٹھاکر نے کہا، “وزیراعظم یہاں اپنے دورے کے دوران تقریباً 30,000-35,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ٹ

سرمایہ کاری کو راغب کرنے والے شعبوں کے بارے میں پوچھے جانے پر، انہوں نے کہا کہ کل ایک واضح تصویر سامنے آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ سرمایہ کاری جموں و کشمیر کے دونوں خطوں میں مختلف شعبوں اور شعبوں میں ہونے جا رہی ہے۔حکام کے مطابق، یونین ٹیریٹری کا مقصد وفد کو اہم مواقع اور ترقی کے شعبوں پر روشنی ڈال کر صنعتوں اور سیاحت میں نئی سرمایہ کاری کو راغب کرنا ہے۔

عہدیداروں نے بتایا کہ وفد سیاحت اور مہمان نوازی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے مواقع تلاش کرنے کے لئے جنوب میں پہلگام اور شمالی کشمیر میں گلمرگ کے مشہور پہاڑی ریزورٹ کا بھی دورہ کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ کاٹیج اور ریشم کی صنعتوں، مصنوعات کی نمائش اور کاریگروں کی ملاقاتیں بھی ہوں گی۔ادھرلیفٹیننٹ گورنر نے کہا ہے کہ ہم سالانہ 6000کروڑ روپے کی بجلی خریدتے ہیں جبکہ ہمیں صرف 2600کروڑ روپے آمدنی حاصل کرتے ہیں اور اس طرح سالانہ 3400کروڑ روپے نقصان اُٹھانا پڑتا ہے ۔

انہوں نے بتایا کہ پچھلی سرکاروں نے بجلی کے نقصانات کو روکنے کیلئے کوئی سنجیدہ کوشش نہیں کی جس کی وجہ سے یہ شعبہ خسارے سے دوچار ہوا ہے اور جموں کے ساتھ ساتھ وادی کشمیر میں بھی بجلی کی فراہمی کا نظام متاثر رہا ۔

لیفٹیننٹ گورنر نے بتایا کہ بجلی چوری اور اس کا غلط استعمال کے رجحان کو روکنے کیلئے سمارٹ میٹروں کو نصب کرنا ناگزیر بن گیا ہے اور ان میٹروں کو دومرحلوں میں لگایا جائے گا ۔پہلے مرحلے میں میٹر نصب کئے جائیں گے اور دوسرے مرحلے میں ان کو ’’پری پیڈ ‘‘ موڈ میں تبدیل کیا جائے گا۔انہوںنے بتایا کہ آج تک جموں میں 6603سمارٹ میٹر لگے، گھروں کو 4فیڈروں سے جوڑا جارہا ہے جو بہتر اور معقول بجلی حاصل کریں گے ۔ اس موقعے پر لیفٹیننٹ گورنر نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ سمارٹ میٹر لگانے میں تعاون دیں تاکہ بجلی کا غیر ضروری استعمال اور اس کی چوری پر روک لگ جاسکے ۔

ھاکر نے کہا کہ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کے دور میں، یونین ٹیریٹری انتظامیہ کو اب تک تقریباً 50,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری ملی ہے جب کہ گزشتہ چھ دہائیوں میں کل سرمایہ کاری 15ہزار کروڑ روپے سے کم ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے گزشتہ 75 برسوںمیں جموں و کشمیر کو ملنے والی سرمایہ کاری سے تین گنا زیادہ سرمایہ کاری کی ہے۔

سال کے آخر تک، جموں و کشمیر میں 75,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری ہوگی‘‘۔انہوں نے کہا کہ وفد میں صنعتکار شامل ہیں جو ٹیکسٹائل، سیمنٹ، فارما، فائبر اور کیبل وغیرہ کی تیاری سے وابستہ ہیں۔ٹھاکر نے یہ بھی کہا کہ حکومت اگلے تین سالوں تک ہر سال میڈیکل سیٹوں کی تعداد میں 1,100

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر