ہندوستان نے حالیہ برسوں میں سفارتی تعلقات کو نئی شکل دی

INDIANDIPLOMACY

نئی دہلی. گزشتہ برسوں میں ہندوستان نے اپنے سفارتی تعلقات میں مضبوطی سے دنیا کے نقشے پر خود کو ثابت کیا ہے۔ 150 ممالک میں کووڈ ویکسین بھیجنے سے لے کر ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کو بلیک لسٹ کرنے کے اقدامات تک، ہندوستان نے ہر جگہ اپنی موجودگی کا دعویٰ کیا ہے۔

دنیا کے بارے میں حکومت کا نظریہ پرانی بیڑیوں سے آزاد ہے۔ یہی وجہ ہے کہ کووڈ کے وقت 150 سے زیادہ ممالک کی مدد کرکے ہندوستان نے دنیا کو صدی کی سب سے بڑی وبا سے لڑنے کا نیا اعتماد دیا ہے۔ کووڈ کے بعد کے دور میں دنیا ایک نئی امید کے ساتھ ہندوستان کی طرف دیکھ رہی ہے۔

یہی وجہ ہے کہ جی2 سے لے کر برکس تک، کواڈ سے ایس سی کوسمٹ تک اور آسیان سے لے کر ایسٹرن اکنامک فورم اور کوپ-26 تک ہندوستان کی آواز کو بہت سنجیدگی سے لیا گیا۔ گزشتہ سال اگست میں ایک ماہ کے لیے یو این ایس سی کی صدارت سنبھالنے کے بعد، ہندوستان نے ثابت کر دیا ہے کہ وہ ایک بہت بڑی عالمی ذمہ داری نبھانے کے لیے تیار ہے۔

اب دنیا کے ہر اہم بین الاقوامی اسٹیج پر پراعتماد ہندوستان کی آواز سنائی دے رہی ہے۔ کووڈ کے مشکل وقت میں وشو گرو انڈیا نے نہ صرف دنیا کو بحران سے نمٹنے کی ہمت دکھائی بلکہ اپنی طاقت اور لچک بھی دکھائی۔ عالمی تعلقات میں ہندوستان کی بدلتی تصویر کی وجہ ملک کی ساکھ کو بڑھانے، سیکورٹی بڑھانے کے ساتھ ساتھ ملک کے لوگوں کی زندگی کو آسان بنانے کی مسلسل کوشش ہے۔ اس کی مثال پاسپورٹ اور ویزا کی سہولیات ہیں۔

گزشتہ چند سالوں میں ملک میں 300 سے زائد نئے پاسپورٹ مراکز بھی قائم کیے گئے ہیں۔ پی ایم مودی نے حال ہی میں کہا تھا کہ ’’ہندوستان کے پاسپورٹ کی طاقت بڑھ گئی ہے، کوئی بھی شہری دوسرے ملک جاتا ہے، جب وہ اپنا ہندوستانی پاسپورٹ دکھاتا ہے تو اسے فخر سے دیکھا جاتا ہے۔‘

‘ انڈین پاسپورٹ سال 2020 2021 میں سات درجے چڑھ کر 83ویں نمبر پر آگیا ہے۔ ہینلے پاسپورٹ انڈیکس امریکہ میں 90 ویں نمبر سے ہے۔ ہندوستان نے دہشت گردی کی بنیاد پر پاکستان کو عالمی سطح پر تنہا کر دیا ہے۔ عالمی عدالت انصاف نے کلبھوشن جادھو کیس میں ہندوستان کے حق میں فیصلہ سناتے ہوئے پاکستان کو قونصلر رسائی دینے پر مجبور کردیا۔ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن میں کم سے کم حمایت نہ ہونے کی وجہ سے پاکستان کو مسئلہ کشمیر کو اٹھانے کا موقع نہیں ملا۔

یہ ہندوستان کے بڑھتے ہوئے تسلط کا نتیجہ ہے کہ پلوامہ میں بزدلانہ دہشت گردانہ حملے اور اس کے بعد ہندوستان کے فضائی حملوں کے بعد تمام بڑے عالمی رہنما بھارت کے ساتھ یکجہتی کے لیے کھڑے ہو گئے

ہندوستان بھی پڑوسی پہلے اور توسیعی پڑوسی کی پالیسیوں پر پختہ یقین رکھتا ہے۔ یہ تسلیم کرتا ہے کہ ہر قوم کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ نہ صرف اپنے دوستوں کا انتخاب احتیاط سے کرے بلکہ ایسے واقعات کو مدنظر رکھتے ہوئے پائیدار شراکت داری کو فروغ دے جن کا عالمی سطح پر اثر پڑتا ہے۔

پڑوسیوں کے ساتھ بہتر تعلقات کو فروغ دینے کے مقصد کے ساتھ، ‘پڑوس پہلے’ کی پالیسی اپنائی گئی، جب کہ دور دراز ممالک کے ساتھ تعلقات کو نئی جہت دینے کے لیے ‘ایکسٹینڈڈ نیبر ہڈ’ کی پالیسی کو بڑی ترجیح دی گئی۔

اعلیٰ قیادت کی نئی سوچ کے ساتھ، ہندوستان کے تئیں دنیا کی جھجک بھی دور ہونے لگی اور ہندوستان کوویڈ کے دور میں ‘واسودھائیو کٹمبکم’ کے جذبے کے ساتھ دنیا کو قیادت فراہم کر رہا ہے۔ اسی منتر سے ہی کورونا کے خلاف ویکسینیشن کا آغاز ہوا اور جب ہندوستان نے دو گھریلو ویکسین تیار کیں تو اس نے 150 سے زیادہ ممالک کو ویکسین فراہم کرکے دوسرے ممالک کی مدد کی۔ انٹرنیشنل سولر الائنس شمسی وسائل سے مالا مال ممالک کی مخصوص توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ہندوستان اور فرانس کی قیادت میں ایک اور پہل ہے۔ اس بین الاقوامی تنظیم کا صدر دفتر بھارت میں ہے۔

اب تک 103 ممالک اس کے رکن بن چکے ہیں۔ ہندوستان امریکہ، جاپان اور آسٹریلیا کے ساتھ کواڈ گروپ کا ایک اہم اسٹریٹجک پارٹنر ہے۔ یہ شراکت داری ایشیا اور بحرالکاہل کے تزویراتی نقطہ نظر سے بہت اہم ہے۔ امریکہ، جاپان اور آسٹریلیا کے ساتھ اب روس سے بھی 22 مذاکرات شروع ہو گئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر