مذہبی اقلیتوں پرامریکی رپورٹ: ہندوستان برہم

AMERICAN REPORT

نئی دہلی: ہندووستان نے ملک میں مذہبی اقلیتوں پر حملوں سے متعلق امریکی محکمہ خارجہ کی رپورٹ پر احتجاج درج کرایا ہے۔ہندوستان کی جانب سے کہا گیا ہے کہ بین الاقوامی تعلقات میں بھی ووٹ بینک کی سیاست چلتی ہے۔

ْحکومت کی جانب سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ تشخیص متعصبانہ خیالات پر مبنی ہے۔ محکمہ خارجہ کے ترجمان ارندم باگچی نے کہا ہے کہ ہم نے بین الاقوامی مذہبی آزادی پر امریکی محکمہ خارجہ کی 2021 کی رپورٹ کے اجراء اور سینئر امریکی حکام کے غلط معلوماتی تبصروں کو نوٹ کیا ہے۔ یہ بدقسمتی ہے کہ بین الاقوامی تعلقات میں ووٹ بینک کی سیاست کی جارہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ  ہم درخواست کریں گے کہ تشخیص درست ہو اور متعصبانہ خیالات سے گریز کیا جائے۔عہدیدار نے کہا کہ ایک تکثیری معاشرے کے طور پرہندوستان مذہبی آزادی اورانسانی حقوق کی قدر کرتا ہے۔ امریکہ کے ساتھ اپنی بات چیت میں ہم نے نسلی اور نسلی طور پر حوصلہ افزائی کے حملوں، نفرت انگیز جرائم اور بندوق کے تشدد سمیت وہاں کے خدشات پر بات کی ہے۔ مسائل کو باقاعدگی سے اجاگر کیا جاتا ہے۔

بتا دیں کہ امریکی محکمہ خارجہ نے بین الاقوامی مذہبی آزادی پر پارلیمنٹ میں پیش کی گئی اپنی سالانہ رپورٹ میں الزام لگایا ہے کہ 2021 میں ہندوستان میں اقلیتی برادریوں کے ارکان پر سال بھر حملے کیے گئے، جن میں قتل اور دھمکیاں شامل ہیں۔محکمہ خارجہ کے ‘فوگی باٹم’ ہیڈکوارٹر میں سیکریٹری آف اسٹیٹ انٹونی بلنکن کی طرف سے جاری کی گئی یہ رپورٹ دنیا بھر میں مذہبی آزادی اور خلاف ورزیوں کی حالت پر اپنا نقطہ نظر پیش کرتی ہے اور اس میں ہر ملک کے لیے الگ الگ باب ہیں۔

اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس میں غیر ملکی حکومت کے ذریعہ اپنے شہریوں کے آئینی طور پر محفوظ حقوق کے بارے میں بات کرنے کا کوئی حق نہیں۔رپورٹ کا ہندوستانی سیکشن مذہبی اقلیتوں کی صورت حال پر کوئی رائے دینے سے گریز کرتا ہے، لیکن اس کے مختلف پہلوؤں کو دستاویز کرتا ہے جیسا کہ ہندوستانی پریس اور حکومت ہند میں رپورٹ کیا گیا ہے۔

رپورٹ میں آزادانہ طور پر مختلف غیر منافع بخش تنظیموں اور اقلیتی اداروں کی جانب سے ان پر حملوں کے الزامات کا بھی حوالہ دیا گیا ہے، لیکن زیادہ تر وقت حکام کی جانب سے تحقیقات کے نتائج پر حکومتی ردعمل پر خاموشی اختیار کی جاتی ہے۔رپورٹ کے ہندوستانی سیکشن میں کہا گیا ہے کہ مذہبی اقلیتی برادریوں کے ارکان پر حملے اور دھمکیاں سال بھر جاری رہے۔ ان میں گائے ذبیحہ یا گائے کے گوشت کی تجارت کے الزامات کی بنیاد پر غیر ہندوؤں کے خلاف ‘گورکشا’ کے واقعات بھی شامل ہیں۔

اس میں آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کے اس بیان کا بھی حوالہ دیا گیا ہے کہ ہندوستان میں ہندوؤں اور مسلمانوں کا ڈی این اے ایک ہی ہے اورمذہب کی بنیاد پر انہیں الگ نہیں کیا جانا چاہیے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر