مہنگائی کے جھٹکے کے لئے ہوجائیں تیار، کل سے جی ایس ٹی میں اضافہ

GST NEW

نئی دہلی: جی ایس ٹی کونسل کے فیصلے کے نفاذ کے بعد پیر سے کھانے پینے کی کئی اشیاء مہنگی ہو جائیں گی۔ ان میں پہلے سے پیک شدہ اور لیبل شدہ کھانے کی اشیاء جیسے آٹا، پنیر اور دہی شامل ہیں، جن پر پانچ فیصد گڈز اینڈ سروسز ٹیکس (جی ایس ٹی) لگے گا۔

اس طرح 5000 روپے سے زیادہ کرایہ پر لینے والے ہسپتال کے کمروں پر بھی جی ایس ٹی ادا کرنا پڑے گا۔ اس کے علاوہ 1000 روپے یومیہ سے کم کرایہ پر لینے والے ہوٹل کے کمروں پر 12 فیصد کی شرح سے ٹیکس لگانے کو کہا گیا ہے۔ ابھی تک اس پر کوئی ٹیکس نہیں ہے۔

مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن کی زیرصدارت جی ایس ٹی کونسل نے گزشتہ ہفتے اپنی میٹنگ میں ڈبے میں بند یا پیک شدہ اور لیبل والی (سوائے منجمد) مچھلی، دہی، پنیر، لسی، شہد، خشک مکھن، خشک سویابین، مٹر وغیرہ کو منظوری دی ہے۔

گندم اور دیگر اناج اور پفڈ چاول پر 5% جی ایس ٹی لگانے کا فیصلہ کیا گیا۔ ٹیکس کی شرح میں تبدیلی کا اطلاق 18 جولائی سے ہوگا۔ اسی طرح ٹیٹرا پیک اور بینک کی طرف سے جاری کردہ چیک پر 18 فیصد جی ایس ٹی اور اٹلس سمیت نقشوں اور چارٹس پر 12 فیصد جی ایس ٹی لگایا جائے گا۔

اس کے ساتھ ہی کھلے میں فروخت ہونے والی غیر برانڈڈ مصنوعات پر جی ایس ٹی کی چھوٹ جاری رہے گی۔ ‘پرنٹنگ/ڈرائنگ انک’، تیز چاقو، کاغذ کاٹنے والے چاقو اور ‘پنسل شارپنرز’، ایل ای ڈی لیمپ، ڈرائنگ اور مارکنگ مصنوعات پر ٹیکس کی شرح بڑھا کر 18 فیصد کر دی گئی ہے۔

سولر واٹر ہیٹر پر اب 12 فیصد جی ایس ٹی لگے گا جو پہلے پانچ فیصد ٹیکس تھا۔ سڑک، پل، ریلوے، میٹرو، ویسٹ ٹریٹمنٹ پلانٹ اور شمشان گھاٹ کے کام کے معاہدوں پر اب 18 فیصد جی ایس ٹی لگے گا، جو اب تک 12 فیصد تھا۔ تاہم، روپ ویز اور بعض سرجیکل آلات کے ذریعے سامان اور مسافروں کی نقل و حمل پر ٹیکس کی شرح کو کم کر کے پانچ فیصد کر دیا گیا ہے۔

پہلے یہ 12 فیصد تھا۔ ٹرک، سامان کی نقل و حمل کے لیے استعمال ہونے والی گاڑیاں، جن میں ایندھن کی قیمت بھی شامل ہے، پر اب 12 فیصد جی ایس ٹی لگے گا جو اس وقت 18 فیصد ہے۔ باگڈوگرہ سے شمال مشرقی ریاستوں کے ہوائی سفر پر جی ایس ٹی کی چھوٹ اب ‘اکانومی’ زمرے تک محدود رہے گی۔

ریزرو بینک آف انڈیا، انشورنس ریگولیٹری اینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی، سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج بورڈ آف انڈیا جیسے ریگولیٹرز کی خدمات کے ساتھ رہائشی مکانات کے کاروباری یونٹوں کو چھوڑنے پر ٹیکس لگے گا۔ بیٹریوں کے ساتھ یا اس کے بغیر الیکٹرک گاڑیوں پر رعایتی 5% جی ایس ٹی جاری رہے گا۔

اے ایم آر جی اینڈ ایسوسی ایٹس کے سینئر پارٹنر رجت موہن نے کہا کہ صحت کی خدمات کو کئی دہائیوں سے ٹیکس قوانین کے تحت ٹیکس غیر جانبدار حیثیت حاصل ہے۔

موہن نے کہا، “ترمیم کے حوالے سے ذہن میں جو سوال آتا ہے وہ یہ ہے کہ چونکہ میڈیکل اسٹیبلشمنٹ کے ذریعے کیا جانے والا علاج ایک جامع سپلائی ہے، اس لیے اس کے لین دین کے مختلف عناصر پر ٹیکس کی نئی ذمہ داری عائد کرنے کے لیے مصنوعی طور پر کاروائی کی جانی چاہیے۔ ایسا لگتا ہے کہ یہ نوٹیفکیشن سیکشن 8 کے پروویژن سے آگے نکلتا ہے، جو تمام مجموعی سپلائی ٹرانزیکشنز پر ایک ہی ٹیکس کو لازمی قرار دیتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر