خان چچا: گوشالہ سے خانہ کعبہ تک کا سفر

khan chacha

آفاق قائم خوانی / جے پور

نہ ہندو برا ہے نہ مسلمان برا ہے،جو برا کام کرے وہ برا ہے

اگرآپ اس شعر کو اچھی طرح سمجھنا چاہتے ہیں تو جیسلمیر کے علاقے تھر کے خان چچا سے ملئے۔  ان سے مل کر آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ کچھ لوگ ہمیں لڑانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ہندو مسلم کے نام پر کچھ لوگ  مذموم حرکتیں کر رہے ہیں۔ تاہم  سماج اور ثقافت کا وہ دھاگہ جس سے ہندوستان کے تعلقات کا دھاگہ بُنا گیا تھا۔ یہ بہت آسان ہے۔ چھیلنے والا نہیں۔ خان چچا جیسے لوگ اپنے  رویوں سے اس چادر کو مزید مضبوط کر رہے ہیں۔

سبھی جانتے ہیں کہ ہندو مذہب میں گائے رکھنا کسی نیکی سے کم نہیں ہے۔ یہاں تک کہا جاتا ہے کہ گائے کی خدمت کرو گے تو جنت ضرور ملے گی۔ لیکن خان چاچا وہ شخص ہے۔ جنہوں نے گائے کی خدمت کرتے ہیں۔ انہوں نے حج کا بھی سفر کیا ہے۔ یہ قسط بہت دلچسپ ہے اور اسے ہیومنز آف بامبے نے اپنے انسٹاگرام پیج پر ہائی لائٹ کیا ہے۔

خان چچا کی کہانی پڑھ کر آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ ذات پات مذہب انسانیت سے زیادہ اہم نہیں ہے۔ خان چاچا  گائے کی خدمت میں اس قدر مگن ہو گئے ہیں کہ گائے کا گوشت بھی کھانا چھوڑ دیا ہے۔ آئیے راجستھان کے تھر کی اس کہانی کی طرف چلتے ہیں، جسے پڑھ کر آپ کے دلوں سے ہندو مسلم کی دیوار گر جائے گی۔اگر آپ کسی کے لیے کچھ کرنا چاہتے ہیں یا اپنا شکر ادا کرنا چاہتے ہیں تو اس کے لیے بھی آپ کو ایک نیا سبق ملے گا۔

خان چچا نے خود نہیں سوچا تھا کہ ان کی زندگی کی لرزتی کشتی کو خوشیوں کا سہارا ملے گا۔

خان چچا گوشالہ میں 

خان چچا زندگی کے مشکل دنوں کو یاد کرتے ہوئے بتاتے ہیں کہ یہ سال 2000 تھا۔ دن خراب تھے۔ کوئی نوکری نہیں تھی۔ نوکری کی تلاش میں جیسلمیر گئے۔وہاں بھی نوکری نہیں ملی۔ وہ ایک سال تک گھومتے رہے۔ اچانک ایک دن انہیں کام مل گیا۔ ایک گائے والا کسی مددگار کی تلاش میں تھا۔ میں نے درخواست دی ہے۔ میری درخواست قبول کر لی گئی۔

میری نوکری کی تصدیق ہوگئی۔ مجھے اس وقت مویشیوں کے ساتھ کام کرنے کا زیادہ تجربہ نہیں تھا۔ اس کے باوجود ان جیسے ناتجربہ کار لوگوں کو رکھا گیا۔ اس کے بعد میں گوشالا میں کام کرنے والا پہلا مسلمان بن گیا۔

خان چچا کا خاندان

خان چچا کا کہنا ہے کہ گوشالا میں کام کرتے ہوئے 3-4 سال گزر گئے۔ میں نے کبھی محسوس نہیں کیا کہ میں وہاں کا حصہ نہیں ہوں۔ ہم سب بھائیوں کی طرح مل کر کام کرتے ہیں۔

awazthevoice

روزانہ صبح گائے کو روٹی کھلانا، ان کا دودھ دینا، یہ میرے روزمرہ کے معمول کا حصہ ہے۔ ابتدائی دور میں تمام کام صرف آمدنی کے طور پر ہوتے تھے۔ میری تنخواہ 1500 تھی۔ مجھے 11 لوگوں کو کھانا کھلانا تھا، جیسے جیسے دن گزرتے گئے، گوشالا کی گائیں میرا خاندان بن گئیں۔ ہر روز ان کے ساتھ وقت گزاریں۔

حج کی خواہش پوری ہوئی

خان چچا نے گائے کی خدمت کرکے اپنے بچوں کو پڑھایا۔ اس وقت سب اچھی پوسٹ پر کام کر رہے ہیں۔ چچا نے بچوں کی شادیاں بھی کی ہیں۔ 51 سال کی عمر گزر گئی۔چچا کہتے ہیں کہ اس دوران مجھے لگا کہ مجھے حج کے لیے بچت کرنی چاہیے۔ عمرہ حج کا ذکر کرتے ہوئے خان چچا کہتے ہیں کہ مرنے سے پہلے ایک بار حج کر لینا چاہیے۔

چچا مشکل میں پڑ گئے 

زمانہ بدل رہا ہے۔ مطلب اگر وقت اچھا جا رہا ہے تو برا وقت بھی بعد میں آتا ہے۔ برے دن آتے ہیں تو اچھے دن بھی آتے ہیں۔ خان چچا کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہوا۔

سال 2019 میں خان چچا نے اپنے چھوٹے بیٹے کو ایک حادثے میں کھو دیا۔ ان کے دو چھوٹے بچوں کی ذمہ داری خان چچا پر آ گئی۔ اس کے بعد چچا نے ساری بچت دونوں کی تعلیم میں لگا دی۔ چچا کہتے ہیں کہ میں جانتا تھا کہ میں صحیح کام کر رہا ہوں۔ مجھے یہ بھی معلوم تھا کہ میرے بڑھتے ہوئے اخراجات سے میں کبھی حج پر نہیں جا سکوں گا۔ خان چچا نے بتایا کہ اس نے اپنا دکھ اپنی گوشالہ کے بھائیوں کو سنایا۔ کہا جاتا ہے کہ جب کوئی دکھ ہوتا ہے  تو خدا اس کو برداشت کرنے کی طاقت بھی دیتا ہے۔

اگلے دن خان چچا کو گوشالا میں ایسا تحفہ ملا جس کا وہ سوچ بھی نہیں سکتے تھے۔ اس کے گائے کے ہندو بھائیوں نے اس کے حج کے لیے تیس ہزار روپے دیے۔ کہا خان چچا یہ ہماری طرف سے آپ کے لیے ہے۔ یہ سن کر خان چچا رو پڑے۔

چچا نے گائے کا گوشت کھانا چھوڑا

خان چچا بتاتے ہیں کہ ایک ماہ بعد ان کی حج پر جانے کی خواہش پوری ہوئی۔ تب سے میں نے گائے کا گوشت کھانا چھوڑ دیا ہے۔ یہ ہندو بھائیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے جیسا تھا۔ اس نے مجھے حج پر بھیج کر میرے ایمان کا احترام کیا تھا۔

مذہب کی منطق سے باہر نکلو

خان چچا بتاتے ہیں کہ اس دن سے میں نے گائے کا گوشت نہیں کھایا۔ کئی سال گزر چکے ہیں، لیکن تب سے اب بھی میں اپنا کام شروع کرنے سے پہلے گایوں کے لیے دعا کرتا ہوں۔ بعض اوقات لوگ پوچھتے ہیں کہ آپ کو دوسروں کے لیے اپنی کھانے کی عادات کیوں بدلنی پڑیں؟ اس لیے میں ان سے صرف ایک بات کہتا ہوں کہ میں ان لوگوں نے مجھے ویسا ہی قبول کیا جیسا میں ہوں۔

اس نے مجھے اپنی خوشی اور اس کے لیے کچھ کرنے کے لیے حج بھیجا، اب یہ میری خوش قسمتی ہے۔ خان چچا نے کہا کہ یہ میرا شکر گزاری کا طریقہ ہے۔ جب آپ مذہب کی منطق سے باہر نکلتے ہیں تو آپ کو سب کچھ سمجھ میں آنے لگتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


ہمارے بارے میں

www.maeeshat.in پر ہم اقلیتوں خصوصا  مسلم دنیا میں کاروبار کو متعارف کرانے اور فروغ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں جو حلال اور حرام کے حوالے سے اپنے آپ کو ممتاز کرتے ہیں۔ شروع سے ہی اس جریدے/ویب سائٹ نے مسلمان صنعت کاروں اور تاجروں کو قائل کیا ہے کہ وہ ہندوستانی معیشت کو مضبوط بنائیں اور دوسرے کارپوریٹ کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید فروغ دیں۔


CONTACT US

CALL US ANYTIME




نیوز لیٹر